ترجمان سندھ حکومت نے تعلیمی ادارے کھولنے کے فیصلے پر نظرثانی کی اپیل کردی

ملک میں کورونا کی صورتحال تاحال غیریقینی ہے، پرائمری سیکشن کھولنے کے فیصلے پر نظرثانی کی جائے، بچے ایس اوپیز پر عملدرآمد نہیں کرسکیں گے۔ ترجمان سندھ حکومت مرتضیٰ وہاب

41

کراچی (عوامی فیصلہ نیوز ) ترجمان سندھ حکومت نے این سی اوسی سے تعلیمی ادارے کھولنے کے فیصلے پر نظرثانی کی اپیل کردی ہے، ملک میں کورونا کی صورتحال تاحال غیریقینی ہے، پرائمری سیکشن کھولنے کے فیصلے پر نظرثانی کی جائے، بچے ایس اوپیز پر عملدرآمد نہیں کرسکیں گے۔

تفصیلات کے مطابق ترجمان سندھ حکومت مرتضیٰ وہاب نے ٹویٹر پر اپنے ٹویٹ میں کہا کہ بطور ایک والد میری اپیل ہے کہ ملک میں کورونا کی صورتحال تاحال غیریقینی ہے۔

چھوٹے بچے کورونا وائرس سے بچاؤ کے ایس اوپیز پر عملدرآمد نہیں کر پائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ میری وفاقی اور صوبائی سندھ حکومت سے اپیل ہے کہ پرائمری سیکشن کھولنے کے فیصلے پر نظرثانی کی جائے۔

واضح رہے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر کے تازہ ترین اعداد وشمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا کے 584 مریضوں کے ٹیسٹ مثبت آئے جبکہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 3 مریض ملک بھر کے ہسپتالوں میں وائرس کی وجہ سے جاں بحق ہوئے۔

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا کے ایکٹو کیسسز کی تعداد6 ہزار 46 ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 28 ہزار 724 کورونا کے ٹیسٹ کیے گئے جن میں سے سندھ میں11 ہزار 42، پنجاب میں 10 ہزار211، خیبرپختونخوا میں 3 ہزار 210، اسلام آباد میں2 ہزار 622, بلوچستان میں 895، گلگت بلتستان میں 397اورآزاد کشمیر میں 347 ٹیسٹ کیے گئے۔ اب تک ملک بھر میں کورونا سے صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 2 لاکھ 88 ہزار 536 ہو چکی ہے۔

دوسری جانب وزیرتعلیم سندھ سعید غنی نے کہا کہ 15ستمبر سے باقاعدہ مرحلہ وار تعلیمی ادارے کھولے جا رہے ہیں۔ بازار کھولنے سے زیادہ مشکل مرحلہ سکول کھولنا ہے۔ والدین کو چاہیے کہ سکولوں میں بچوں کو ماسک پہنانے اور ایس اوپیز پر عملدرآمد کروانے میں کردار ادا کریں۔ زیادہ تر والدین اپنے بچوں کو سکول نہیں بھیجنا چاہتے۔

اس لیے سکولوں میں آن لائن تعلیم جاری رکھی جاسکتی ہے۔ لیکن جن سکولوں میں ایس اوپیز کی خلاف ورزی ہوگی ان کو بند کردیا جائے گا۔